خبردار، چینی باشندے اپنے ملک میں بیٹھ کر پاکستانی اے ٹی ایم خالی کرنے لگے

خبردار، چینی باشندے اپنے ملک میں بیٹھ کر پاکستانی اے ٹی ایم خالی کرنے لگے


لاہور(24 نیوز) اے ٹی ایم مشینیں استعمال کرنیوالے ہو جائیں ہوشیار ، چینی باشندے اپنے ملک میں بیٹھ کر پاکستانی مشینیں خالی کرنے لگے۔

اے ٹی ایم کا استعمال کرنے والے ہوشیار خبردار ہو جائیں ، چینی باشندے کیسے پاکستانی اے ٹی ایم سے فراڈ کرتے ہیں ، ٹونٹی فور نیوز نے معاملے سے پردہ اٹھا دیا۔

اے ٹی ایم مشین سے کارڈ کا ڈیٹا چوری کرنے کی ایک سال پرانی کہانی کے ثمرات سامنے آنے لگے ، پاکستانی بینکوں کی اے ٹی ایم مشین بیرون ملک استعمال ہونے کا انکشاف ہوا ہے۔

گزشتہ برس ایک جبکہ ایک سال قبل 2 چینی باشندوں کو ایف آئی اے نے گرفتار کیا ، تینوں ملزمان عدالت بھی گئے ، تفتیش بھی ہوئی تو پتہ چلا کہ ملزمان اے ٹی ایم فراڈ گروہ کا حصہ ہیں۔


ایف آئی اے حکام نے بتایا ملزمان خفیہ کیمرے اے ٹی ایم مشین میں نصب کر کے ڈیٹا چین میں موجود اپنے گروہ کو دیتے تھے۔ایک سال پرانی کہانی اس وقت تازہ ہوئی جب کراچی کے نجی بینک حکام کو فراڈ کی شکائت ملی۔

ترجمان حبیب بینک نوید اصغر نے انکشاف کیا کہ 579 اکاؤنٹس سے ایک کروڑ روپے تک کی رقم نکالی گئی ، بینک حکام نے پاکستان میں چار اے ٹی ایم مشنیوں میں خفیہ ڈیوائس لگنے کا بھی انکشاف کیا۔


چار اے ٹی ایم مشینوں میں سے ایک اے ٹی ایم کراچی جبکہ تین مشین اسلام آباد کی بتائی گئی ہیں۔


دوسری جانب اسٹیٹ بنک آف پاکستان نے بھی حبیب بینک کے اے ٹی ایم مشینوں سے ہونے والے فراڈ کی شکایت کی تصدیق کرتے ہوئے متاثرہ بینک سے اعدادو شمار مانگ لیے ہیں۔

ترجمان یو بی ایل بینک کا اپنے مواقف میں کہنا ہے کہ ہماری کسی اے ٹی ایم مشین سے سکیمنگ کی کوئی شکایات موصول نہیں ہوئی۔