عظیم مزاح نگار، افسانہ نگار پطرس بخاری کو ہم سے بچھڑے 59 برس بیت گئے

 عظیم مزاح نگار، افسانہ نگار پطرس بخاری کو ہم سے بچھڑے 59 برس بیت گئے


ویب ڈیسک(24نیوز):دنیائے اردو کے عظیم مزاح نگار، افسانہ نگار، معلم اور اقوام متحدہ میں پہلے پاکستانی مندوب احمد شاہ پطرس بخاری کو ہم سے بچھڑے 59 برس بیت گئے۔ پانچ دسمبر 1958 کو ساٹھ سال کی عمر میں نیویارک امریکہ میں وفات پا ئی۔

5 دسمبر ایسی شخصیت کا یوم وفات ہے جسے اہل ذوق، مزاح کے شہسوار، معلم اور سفارت کار کے طور پر جانتے ہیں، پطرس بخاری جنکا اصل نام سید احمد شاہ تھا، نے یکم نومبر 1898 میں پشاور میں آنکھ کھولی،، ابتدائی تعلیم پشاور میں اور اعلی تعلیم گورنمنٹ کالج لاہور میں حاصل کی اور پھراسی ادارے میں بطور معلم خدمات انجام دینے لگے۔اہم سرکاری مناصب پر فائز رہنے کے باعث ادبی محفلوں میں شرکت کی فرصت بہت کم ملی، انہوں نے بہت کم لکھا، لیکن جو بھی لکھا وہ امر ہو گیا۔پطرس کا مختصر سرمایہ مزاح، ظرافت کے بڑے بڑے کارناموں پر بھاری ہے، اتنا کم رخت سفر لے کر بقائے دوام تک پہنچانا آپکا ہی خاصہ تھا۔

پطرس بخاری کی گرانقدر ادبی، تعلیمی اور سفارتی خدمات کے صلے میں حکومت پاکستان نے انہیں تمغہ ہلال امتیاز سے نوازا، انکے 100 سالہ جشن پیدائش پر یادگاری ٹکٹ بھی جاری کیا گیا، علمی اور سفارتی علم کے خزانے سے بھرپور یہ شخصیت پانچ دسمبر 1958 کو ساٹھ سال کی عمر میں نیویارک امریکہ میں وفات پا گئی۔