پاک سرزمین کے چیئرمین مصطفیٰ کمال نے سانحہ بلدیہ کو حادثہ قرار دیدیا

پاک سرزمین کے چیئرمین مصطفیٰ کمال نے سانحہ بلدیہ کو حادثہ قرار دیدیا


کراچی (24نیوز) پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفیٰ کمال نے سانحہ بلدیہ کو حادثہ قرار دے دیا انہوں نے کہا بلدیہ ٹاون فیکٹری میں آگ ایک حادثہ تھا ، آگ شارٹ سرکٹ سے لگی، ہم جانتے ہیں آگ لگائی نہیں لگ گئی تھی ، فیکٹری جرمنی سے انشورڈ تھی، اس کے پیسے لینے کے لئیے جلانے کا ڈرامہ کیا۔

تفصیلات کے مطابق پاک سرزمین پارٹی کے چیئرمیں مصطفیٰ کمال نے سانحہ بلدیہ کو حادثہ قرار دے دیا، پی ایس پی ہاؤس پر حیدر آباد روانگی سے قبل میڈیا سے بات کرتے ہوئے مصطفیٰ کمال نے کہا کے بلدیہ ٹاون فیکٹری سانحہ نہیں حادثہ تھا،اس سانحہ کا پر سیاست کی جارہی ہے، آگ شارٹ سرکٹ سے لگی، مالکان نے اپنی رقم بچانے لئیے فیکٹری کے دروازے بند کردئیے تھے۔

مصطفیٰ کمال نے کہا کےفیکٹری مالکان ملک میں نہیں پر کیس چلایا جارہا ہے، فیکٹری جرمنی سے انشورڈ تھی اس کے پیسے لینے کے لئیے جلانے کا ڈرامہ کیا گیا، پانچ بجے فیکٹری میں تنخواہ بٹ رہی تھی، مالکان نے کہا تالا لگا دو کوئی پیسے نہ لے جاسکے، فیکٹری مالکان ملک سے باہر کیوں ہیں وطن واپس آئیں ، مالکان ملک میں نہیں لیکن کیس چلایا جا رہا ہے ، مصطفیٰ کمال نے سابق گورنر سندھ کو سانحہ بلدیہ میں ملوث قرار دیا۔

مصطفی کمال ایم کیو ایم پاکستان کے ایک مرتبہ حدف تنقید بنایا اور کہا کے ایم کیوایم لندن کی چائنہ کٹنگ کرکے ایم کیوایم پاکستان بنالی گئی، چائنہ کٹنگ پارٹی کو پی ایم ایل ن کی حمایت حاصل ہے، جنرل جیلانی کی چوسنی چوس کر پلے بڑھے ہیں انکو ہم برے لگتے ہیں ہمیں فرعون کے سامنے کھڑے ہونے کی سزا دی جارہی ہے۔