زمین کی گردش کی رفتار میں کمی، 2018ء میں بڑے پیمانے پر زلزلوں کا خطرہ

زمین کی گردش کی رفتار میں کمی، 2018ء میں بڑے پیمانے پر زلزلوں کا خطرہ


 ویب ڈیسک(24نیوز)سائنسدانوں نے زمین کی گردش کی رفتار میں کمی کے باعث 2018 میں ہولناک اور بڑے پیمانے پر زلزلوں سے خبردار کر دیا ہے۔یونیورسٹی آف کولوراڈو اور مونٹانا یونیورسٹی کے سائنسدانوں نے جیولوجیکل سوسائٹی کے سالانہ اجلاس میں اپنی تحقیق میں زمین کی گردش اور زلزلوں کے آپس میں تعلق کا حوالہ دیا۔

سائنسدانوں نے تحقیقی رپورٹ میں خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پچھلی ڈیڑھ صدی کے دوران 5 ادوار ایسے گزرے ہیں جن میں زمین کی گردش کرنے کی رفتار میں کمی واقع ہوئی، اور اس دوران شدید زلزلوں کی تعداد میں اضافہ ہوا۔رپورٹ کے مطابق زمین کی گردش اور زلزلوں کے درمیان تعلق ہمیں آئندہ 5 برسوں کے دوران آنے والے خطرناک زلزلوں کے بارے میں آگاہ کر رہا ہے۔ رواں برس اب تک 6 بڑے زلزلے آچکے ہیں تاہم آئندہ برس یہ تعداد 20 تک ہو جائے گی۔ سائنسدان دن کے دورانیے میں کمی کے زلزلوں سے تعلق کے حوالے سے ابھی تک واضح طور پر تو پتہ نہیں چلا سکے ہیں لیکن انہیں شبہ ہے کہ زمین کے طرزعمل میں تبدیلی زلزلوں اور دن کے دورانیے میں کمی کا باعث ہو سکتی ہے۔

محققین کا کہنا ہے کہ اگرچہ زمین کی گردشی رفتار میں کمی بہت ہی کم ہے یعنی دن کے دورانیے میں ملی سیکنڈ کی تبدیلی لیکن اس سے بڑے پیمانے پر زیر زمین توانائی کا اخراج ممکن ہے جس سے ممکنہ طور پر تباہ کن زلزلوں میں اضافہ ہوسکتا ہے۔